May 24, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/farmington-realestate.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
بايدن أمام لائحة ضحايا سقطوا في الحرب العالمية

امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا ہے کہ نیو گنی کے جزیرے پر دوسری جنگ عظیم کے دوران مار گرائے گئے طیارے کے بعد ان کے چچا کی لاش کا گوشت کھایا گیا تھا لیکن وائٹ ہاؤس اور سرکاری ریکارڈ کے مطابق صدر بائیڈن کے بیانات حقیقت کے مطابق نہیں۔

امریکی ایوان صدر نے جمعرات کو کہا کہ بائیڈن کی بتائی گئی کہانی میں مبالغہ آرائی ہے مگر یہ بہت سے خاندانی لیجنڈز کے ساتھ ہوتی ہے۔

بدھ کو اپنے آبائی شہرسکرینٹن پنسلوانیا میں انتخابی دورے کے دوران بائیڈن دوسری جنگ عظیم میں ہلاک ہونے والوں کی یادگار کے سامنے رکے، جہاں انہوں نے اپنے چچا سیکنڈ لیفٹیننٹ ایمبروز جے فنیگن کی یاد میں اظہار افسوس کیا۔

81 سالہ صدر جو 1944ء میں ایک سال کے تھے جب ان کے چچا کا انتقال ہوا نے یادگار سے قدم رکھا اور ناموں کی ایک لمبی فہرست میں اپنے دائیں ہاتھ سے کندہ اپنے چچا کا نام چھوا۔

بائیڈن نے بعد میں پٹسبرگ میں اسٹیل ورکرز کے ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ “ان کے چچا کے کے طیارے کو نیو گنی میں فائرنگ کا نشانہ بنایا گیا تھا اور انہیں اس کی لاش کبھی نہیں ملی کیونکہ نیو گنی کے اس حصے میں بہت سے کینبل موجود تھے”۔

بائیڈن نے صحافیوں کے سامنے کہانی دہرانے میں کوئی ہچکچاہٹ محسوس نہیں کی اور کہا کہ ان کے چچا کے طیارے کو ایک ایسے علاقے میں مار گرایا گیا جہاں نیو گنی میں بہت سے گوشت خور قبایل موجود تھے۔ امریکی حکومت نے طیارے کے کچھ حصے برآمد کر لیے تھے مگر بائیڈن کےچچا کی لاش نہیں ملی‘‘۔

بائیڈن کی طرف سے سنائی گئی کہانی میں درحقیقت امریکی محکمہ دفاع کے ریکارڈ میں درج بہت سے حقائق کا فقدان ہے۔اس کے علاوہ وہاں پر کینبل کی کہانی کے حوالے سے بھی مبالغہ آرائی پائی جاتی ہے

امریکی جنگی قیدیوں اور لاپتہ افراد کے امور کی ذمہ دار سرکاری ایجنسی کی ویب سائٹ کے مطابق بائیڈن کے چچا ایک فوجی طیارے پر نیو گنی جا رہے تھے جس کا مشن ڈاک پہنچانا تھا۔اسے۔ طیارےکو نامعلوم وجوہات کی بنا پر جزیرے کے ساحل سے دور اترنے پرمجبور کیا گیا۔

ایجنسی نے مزید کہا کہ طیارہ پانی سے ٹکرایا اور اس کے عملے کے تین ارکان ملبے سے باہر نکلنے میں ناکام رہے، جبکہ صرف ایک زندہ بچا جسے وہاں سے گذرنے والی ایک کشتی نےنکالا۔

ایجنسی نے کہا کہ”اگلے دن کی فضائی تلاشی میں لاپتہ طیارے یا لاپتہ عملے کے ارکان کا کوئی سراغ نہیں ملا”۔

بائیڈن کے افسانوی بیان میں اٹھائے گئے تنازعہ کے جواب میں وائٹ ہاؤس کی ترجمان کیرین جین پیئر نے تسلیم کیا کہ صدر کے چچا “اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے تھے جب وہ فوجی طیارہ بحرالکاہل میں گر کر تباہ ہو گیا تھا، تاہم صدر کا یہ دعویٰ کہ ان کے چچا کی لاش کا گوشت کھایا گیا ہوگا حقائق کے منافی ہے”۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *