May 19, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/farmington-realestate.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
الحكم لحظة تعرضه للضرب على يد لاعبي الفريق الليبي

افریقی کنفیڈریشن چیمپئن شپ کے ایک میچ میں اس وقت افسوسناک صورتحال دیکھنے میں آئی جب مصری ریفری کو دونوں ٹیموں میں سے ایک کے کھلاڑی نے مار پیٹ کی۔ مصری فٹ بال ایسوسی ایشن نے مداخلت کرتے ہوئےاس واقعے کی فوری تحقیقات کی درخواست کی ہے۔

مصری انٹرنیشنل ریفری محمد معروف نے افریقی کنفیڈریشن کپ میں گذشتہ روز ہونے والے مراکش کے ’آر ایس برکان‘ اور لیبیا کے ابو سلیم کے درمیان میچ میں امپائرنگ کی۔میچ کے بعد لیبیا کے ابو سلیم ٹیم کے کھلاڑیوں نے اسٹاپج ٹائم بڑھانے کے فیصلے کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے ریفری کو مارا پیٹا۔

میچ کے واقعات میں اس وقت دلچسپ تضاد دیکھنے میں آیا جب دونوں ٹیموں کے درمیان 10 منٹ کا اسٹاپیج ٹائم گننے تک ہر ٹیم کے دو دو گول سے برابری رہی، جس کے بعد آر ایس برکان کی ٹیم نے 97 ویں منٹ میں گول کر کے برتری حاصل کر لی۔ تاہم اسے ریفری نے منسوخ کر دیا۔ اس طرح میچ جاری رہا اور مراکش کی ٹیم نے105 ویں منٹ میں فاتحانہ گول کر دیا جس پر ابو سلیم کے کھلاڑیوں نے اعتراض کیا۔ جس پرریفری نے 5 منٹ کا اضافہ کرنے کا الزام لگایا۔

ایک گھنٹے کے ایک چوتھائی تک پہنچنے کے لیےاضافی پانچ منٹ دیے تاکہ مراکش کی ٹیم فاتح گول کرسکے اورآگے بڑھ سکے۔

سیکورٹی فورسز نے مصری ریفری کو میدان سے باہر اتاردیا۔

لیبیا کی ٹیم کے کھلاڑیوں نے مصری ریفری پر حملہ کر دیا جس کے بعد سکیورٹی حکام نے مداخلت کرتے ہوئے اسے تحفظ کے لیے میدان سے ہٹا دیا۔

جمال عالم کی سربراہی میں فٹ بال ایسوسی ایشن نے کنفیڈریشن آف افریقن فٹ بال کوایک خط بھیجا جس میں مصری ریفری کے خلاف حملوں کی مذمت اور مذمت کی گئی۔

فٹ بال ایسوسی ایشن نے اس واقعے کی تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔ ساتھ ہی فٹ بال ایسوسی ایشن کے اپنے ریفریوں کے تحفظ اور میدان میں اور باہر ان کے حقوق کے تحفظ پر افریقی کنفیڈریشن پر اعتماد پر زور دیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *